دوسری جنگ عظیم کے بعد سے ایشیا میں امریکی دفاعی مفادات کیلئے جاپان اور امریکہ کے اتحاد کو بنیادی حیثت حاصل ہے ۔علاقائی  استحکام اور خوشحالی دونوں ملکوں کی شراکت داری کی بنیاد ہے۔

یہاں دفاعی مسائل کو مدنظر رکھتے ہوئے 20ویں صدی کے وسط سے امریکہ اور جاپان کے مابین سفارتی تعاون کی تاریخ کا مختصر جائزہ لیا جا رہا ہے۔

1951-1952

Men standing behind person seated at table signing document (© Getty Images)
8 ستمبر 1951 کو سان فرانسسکو کے امن کے معاہدے پر دستخط کرنے کے فوری بعد جاپان کے وزیر اعظم شیگرو یوشیڈا امریکہ کے ساتھ سلامتی کے معاہدے پر دستخط کر رہے ہیں۔ (© Getty Images)

دوسری جنگ عظیم کے رسمی اختتام اور جاپان پر اتحادیوں کے قبضے کے بعد  جاپان سے امن معاہدے  کے لیے عہدیدار 8 ستمبر 1951 ء کو سان فرانسسکو میں ملے۔ 28 اپریل 1952 کو جب یہ معاہدہ نافذ العمل  ہوا توجاپان ایک بار پھر خود مختار ریاست اور امریکہ کا اتحادی بن گیا۔

امن معاہدے پر دستخط کرتے ہوئے امریکہ اور جاپان کے عہدیداروں نے امریکہ اور جاپان کے درمیان باہمی دفاع اور تعاون کے معاہدے پر بھی دستخط  کیے جس کی دس سال بعد تجدید کی جا سکتی تھی۔ اس معاہدے میں جاپان کی سلامتی کے انتظامات ایسے انداز سے کیے گئے ہیں کہ جن سے اس کے جنگ مخالف آئین کو تحفظ ملتا ہے۔

1960

Japanese and American officials signing treaty (© Robert M. Baer/AP Images)
19 جنوری 1960 کو واشنگٹن میں جاپان کے وزیراعظم نوبوسوکے کِشی امریکہ اور جاپان کے تجدید شدہ باہمی سلامتی کے معاہدے پر دستخط کر رہے ہیں۔ کِشی، وسط میں بائیں طرف، صدر ڈوائٹ آئزن ہاور کے برابر بیٹھے ہوئے ہیں۔ (© Robert M. Baer/AP Images)

جاپان اور امریکہ نے 19 جنوری 1960 میں باہمی دفاع اور تعاون کے ایک نظرثانی شدہ معاہدے پر دستخط کیے جس کے تحت فریقین اس بات پر رضامند ہوئے کہ جاپان کے زیر انتظام علاقوں پر حملے کی صورت میں دونوں ممالک ایک دوسرے کی مدد کریں گے حالانکہ جاپان آئینی طور  پر بین الاقوامی تنازعات کو فوجی قوت سے حل کرنے کا مخالف ہے۔ معاہدے میں بین الاقوامی اور اقتصادی تعاون کی دفعات کو بھی شامل کیا گیا۔

1969-1972

Japanese Prime Minister Eisaku Sato and U.S. President Richard Nixon standing and smiling (© AP Images)
19 نومبر 1969 کو صدر رچرڈ نکسن، دائیں، واشنگٹن میں جاپانی وزیراعظم ایساکو ساتو کا استقبال کر رہے ہیں۔ (© AP Images)

نومبر 1969 ء میں جب جاپانی وزیر اعظم ایساکو ساٹو نے واشنگٹن کا دورہ کیا تو امریکی صدر رچرڈ نکسن اور جاپانی وزیراعظم نے  ایک مشترکہ اعلامیے میں دورانِ جنگ امریکی قبضے میں آنے  والے جاپانی علاقے اوکی ناوا کو 1972 ء تک واپس کرنے کا اعلان کیا۔ 18 ماہ کی بات چیت کے بعد واپسی کی ٹھوس دفعات کے تحت 1971 ء میں دونوں ممالک نے ایک معاہدے پر دستخط کیے۔

1978-1981

Boats and island in distance (© Asahi Shimbun/Getty Images)
اپریل 1978 میں اوکیناوا، جاپان کے قریب سین ککاس جزائر میں کوبا جیما جزیرے کے قریب ماہی گیری کے چینی جہاز کے قریب جاپنی کوسٹ گارڈ کا ایک جہاز گشت کر رہا ہے۔ (© Asahi Shimbun/Getty Images)

جاپان اور امریکہ نے باہمی تعلقات  کے  راہنما اصول طے کرتے ہوئے دونوں ممالک کی افواج کے کردار کا تعین کیا گیا۔ (جاپان کی دفاعی فوج ہے۔ مگر بیرون ملک یو این امن مشنوں کی کاروائیوں کے علاوہ جاپان کسی قسم کی کوئی  فوجی کاروائی نہیں کرتا۔)

جاپان اپنے سمندروں اور اِن کے اردگرد  ساحلوں کے دفاع سے متعلق زیادہ سے زیادہ  ذمہ داریاں پوری کرتا ہے،  جاپان میں امریکی افواج کی زیادہ  سے زیادہ  مدد کا وعدہ کرتا ہے اور اپنے  ذاتی دفاع کی  صلاحیتوں کو مضبوط تر بناتا ہے۔

1983-1987

Ronald Reagan and Yasuhiro Nakasone sitting on a couch (© Ira Schwartz/AP Images)
صدر رونلڈ ریگن 1985ء میں جاپانی وزیراعظم یاسو ہیرو ناکاسونے کے ساتھ سرکاری ملاقات شروع ہونے سے پہلے باتیں کر رہے ہیں۔ دونوں لیڈر سالوں پر پھیلی مدت کے دوران جوہری توانائی اور تجارت پر بات چیت کرنے کے لیے اکثر ملتے رہتے تھے۔ (© Ira Schwartz/AP Images)

جاپان اور امریکہ کے ایک ورکنگ گروپ نے 1983 ء میں توانائئ کے شعبوں میں تعاون کے حوالے سے ریگن اور ناکاسونے کا مشترکہ اعلامیہ تیار کیا۔ ایٹمی توانائی کے پرامن استعمال سے متعلق تعاون  کے ایک سمجھوتے کی وجہ سے 1987ء میں دو طرفہ تعلقات میں مزید پیش رفت ہوئی۔

2011-2018

Rescue workers searching through debris (MSgt Jeremy Lock/USAF)
امریکی فوجی تلاش کرنے اور بچانے والی ایک جاپانی امدادی ٹیم کے اراکین کے ساتھ مل کر یونوسومائی، جاپان میں مارچ 2011 میں میں امدادی کام کر رہے ہیں۔ (MSgt Jeremy Lock/USAF)

مارچ 2011 ء میں 9 درجے کی شدت سے آنے والے زلزلے اور بعدازاں سونامی نے شمال مشرقی جاپان تباہ مچا دی۔ امریکہ اور جاپان کی افواج نے ضروری اشیاء کی فراہمی اور امدادی کاروائیوں کی رابطہ کاری کے دونوں ممالک کے اتحاد کی تاریخ کے ایک بڑے مشن کا آغاز کیا۔

جولائی 2018 ء میں شدید بارشوں کے نتیجے میں آنے والے سیلاب اور مٹی کے تودوں سے مغربی جاپان میں نقصان ہوا  تو بین الاقوامی امداد کے امریکی ادارے یو ایس ایڈ کے بیرونی ممالک میں ہونے والی تباہیوں میں مدد کرنے والے دفتر نے متاثرہ لوگوں کی مدد کے لیے ہنگامی فنڈ فراہم کیے۔ یو ایس ایڈ نے ایک بار پھر انسانی ہمدردی کی بنیاد پر ستمبر 2018 ء میں6.6  کی شدت سے آنے والے  زلزلے سے متاثر ہونے والے جاپانی جزیرے، ہوکا ئیڈو میں بھرپور امدادی کاروائیں کیں۔

یہ مضمون ایک بار پہلے 24 مئی کو شائع  ہو چکا ہے۔