امریکہ کی وینیز ویلا پر عائد پابندیوں کی وضاحت

مائیکل مورینو اور نکولس مادورو ایک دوسرے سے باتیں کر رہے ہیں۔ (© Ariana Cubillos/AP Images)
نکولس مادورو، دائیں اور وینیز ویلا کے سپریم کورٹ کے صدر، مائیکل مورینو امریکہ کی پابندیوں کی فہرست میں شامل ہیں۔ (© Ariana Cubillos/AP Images)

2017ء سے لے کر اب تک امریکہ نے وینیز ویلا کے اندر اور بیرونی ممالک میں مادورو کی سابق حکومت سے تعلق رکھنے والے افراد، کاروباروں، اور تیل کی کمپنیوں پر پابندیاں لگائی ہیں۔

پابندیاں کیوں ضروری ہیں اور حقیقت میں ان کا اثر کس پر پڑتا ہے؟

امریکی پابندیوں کا مقصد یہ یقینی بنانا ہوتا ہے کہ مادورو اور اس کے کاسہ لیس، سونے کی غیرقانونی کان کنی، سرکار کے زیرانتظام چلنے والی تیل کی کمپنیوں، یا ایسے دیگر کاروباری لین دین سے فائدہ نہ اٹھائیں جو حکومتی مجرمانہ سرگرمیوں اور انسانی حقوق کی پامالیوں کو ممکن بناتی ہیں۔

محکمہ خارجہ کی کیری فلپیٹی نے امریکی سینیٹ کی ایک کمیٹی کو بتایا کہ مثال کے طور پرتیل کی پابندیوں کا "مقصد مالی آمدنی کے ذرائع کو ختم کرنا اور تیل کی صنعت کی سرپرستی کے لیے استعمال کیے جانے کو روکنا ہے۔”

اس کا یہ مطلب ہے کہ یہ پابندیاں کولمبیا کے ایک تاجر، ایلکس ساب جیسے لوگوں کی گرفت کرتی ہیں۔ ساب نے جعلی کمپنیوں کے ایک نیٹ ورک کو بولی کے بغیر اور اصل قیمت سے زائد لاگتوں والے ٹھیکوں سے حاصل ہونے والے منافعوں کو چھپانے کے لیے استعمال کیا۔ یہ ٹھیکے رشوتیں اور کمشنیں دے کر حاصل کیے گئے۔ اب ساب پر پابندیاں عائد ہیں اور وہ امریکہ میں یا امریکی مالیاتی نظام کے ذریعے کاروبار نہیں کر سکتا۔

اقتصادی ماہرین اس بات پر متفق ہیں کہ امریکی پابندیاں وینیز ویلا کی اقتصادی بدحالی کی ذمہ دارنہیں ہیں۔ بروکنگ انسٹی ٹیوشن اور ہارورڈ کی ایک رپورٹ کے مطابق، "وینیز ویلا میں ایک عرصے پر پھیلے سماجی و اقتصادی نتائج کا تجزیہ کرتے ہوئے یہ بات واضح طور پر سامنے آتی ہے کہ زندگی کے معیاروں میں آنے والے انحطاطوں کی بڑی تعداد 2017 میں امریکی پابندیوں کی قانونی منظوری سے بہت پہلے واقع ہوچکی تھی۔”

اور جہاں امریکی حکومت نے مادورو کے حامی افراد پر اور اُن کے کاروباروں پر پابندیاں عائد کی ہیں وہیں امریکہ نے اُس امداد میں کمی نہیں کی جو وہ وینیز ویلا کو دیتا چلا آ رہا ہے۔

2017 اور 2019 کے درمیان امریکہ نے وینیز ویلا کے عوام کے لیے 656 ملین ڈالر مالیت کی زندگی بچانے والی دواؤں کی شکل میں امداد فراہم کی۔ وینیز ویلا کی صحت اور زرعی ضروریات پوری کرنے کے لیے، صدر ٹرمپ کے مالی سال 2021 کے لیے تجویز کردہ بجٹ میں 205 ملین ڈالر کی رقم شامل ہے۔

محکمہ خارجہ کے ایلیٹ ابراہامز نے کہا کہ اگرچہ امریکی حکومت نے افراد اور تنظیموں پر پابندیاں لگا رکھی ہیں تاہم ایسے لوگوں کے لیے اِن "پابندیوں کا مستقل ہونا ضروری نہیں جو وینیز ویلا کے جمہوری مستقبل میں اپنا حصہ ڈالنا چاہتے ہیں۔” انہوں نے مزید کہا کہ مگر "اُن لوگوں کو جو مادورو کی حمایت سے فائدے اٹھا رہے ہیں، اس تنبیہ پر کان دھرنے چاہیئیں۔”