امریکی کسانوں کی دنیا کو خوراک کی فراہمی

امریکہ کی چوٹی کی زرعی پیداواریں دکھانے والا گراف۔ (State Dept./J. Maruszewski)
امریکہ کی چوٹی کی زرعی پیداواریں دکھانے والا گراف۔ (State Dept./J. Maruszewski)

امریکی کسان بقیہ دنیا کو اپنی اعلٰی کوالٹی کی اجناس جتنی زیادہ مقدار میں آج  بیچ  رہے ہیں امریکہ کی زرعی تاریخ میں اس کی پہلے کوئی مثال موجود نہیں۔

4 مارچ کو وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے آئیووا میں کسانوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امریکی کسان “جتنی مقدار میں آج اجناس پیدا کر رہے ہیں اس کے بارے میں چند برس قبل دنیا سنتی تو ہکا بکا رہ جاتی۔”

امریکہ زرعی اجناس اور خوراک برآمد کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ملک ہے۔ سال 2018 میں 139.5 ارب ڈالر مالیت کی زرعی اجناس برآمد کی گئیں۔ 2017 کے مقابلے میں برآمدات میں 1.5 ڈالر کا اضافہ ہوا۔

امریکی کسانوں اور دنیا بھر کے اُن ممالک کے لیے یہ ایک اچھی خبر ہے جو اپنی پوری آبادی کو معقول مقدار میں خوراک فراہم کرنے کے لیے اعلیٰ معیار کی محفوظ اور قابل اعتبار امریکی زرعی پیداوار درآمد کرتے ہیں۔

امریکہ کیا کاشت کرتا ہے

امریکہ کی وسط غربی ریاستوں، ایلا نوائے، آئیووا، نیبراسکا اور دیگر میں گاڑی پر سفر کرنے والے ہر شخص کو فوری اندازہ ہو جاتا ہے کہ مکئی اور سویابین امریکہ میں سب سے زیادہ اگائی جانے والی فصلیں ہیں اور زرعی شعبے میں ان کی ایک بہت بڑی مقدار بیرونی ممالک کو برآمد کی جاتی ہے۔

اگر آپ کنسس، نارتھ ڈکوٹا، مونٹانا اور واشنگٹن کا سفر کریں تو منظر نامے پر گندم کے کھیت چھائے ہوئے دکھائی دیتے ہیں۔

گوشت پیدا کرنے والی تین سب سے بڑی ریاستوں یعنی ٹیکسس، نیبراسکا اور کنسس کی سیر کرنے والوں کو ہر طرف مویشیوں کے بڑے بڑے ریوڑ گھومتے ہوئے دکھائی دیں گے۔

امریکی محکمہ زراعت سے وابستہ ماہر معاشیات برائس کُک کہتے ہیں، “امریکی زرعی شعبہ بے حد متنوع ہے۔ خوراک کے امریکی شعبے کی گنجائش اور تنوع  پورے زرعی شعبے کی بارآوری اور رنگا رنگی کو ظاہر کرتا ہے۔”

زرعی برآمدات کی بدولت کھیتی باڑی اور گلہ بانی کے ساتھ ساتھ  پراسیسنگ، پیکیجنگ اور اجناس کی نقل و حمل کے شعبوں سے دس لاکھ سے زیادہ افراد کے روزگار وابستہ ہیں۔

امریکی زراعت کا مستقبل

2050ء تک دنیا بھر میں خوراک کی طلب میں 60 فیصد تک اضافے کی توقع ہے۔ اس چیلنج سے نمٹنے کے لیے امریکہ نئے زرعی طریقہائے کار وضع کرے گا، نئی منڈیاں پیدا کرے گا اور غیرمنصفانہ تجارتی رکاوٹوں کو دور کرے گا۔

امریکی زرعی برآمدات وصول کرنے والے چوٹی کے ممالک۔ (State Dept./J. Maruszewski)
امریکی زرعی برآمدات وصول کرنے والے چوٹی کے ممالک۔ (State Dept./J. Maruszewski)

پومپیو نے امریکی کسانوں کو بتایا، “ہمارے آزاد منڈیوں کے نظام کی وجہ سے ہماری کوالٹی بھی بہترین ہوتی ہے۔ کمپنیاں مارکیٹ کی بنیاد پر چلنے والی معیشت میں اپنے برانڈ کی قدر کرتی ہیں اور اپنی شہرت کے تحفظ کے لیے کام کرتی ہیں۔ مسابقت اور انتخاب کی وجہ سے لوگ قانون کے مطابق کاروبار کرتے ہیں۔”

پومپیو نے کہا، “مجھے  اعتماد ہے کے اگلے ارب افراد، اِن کے بعد کے ارب افراد جن کو دنیا بھر میں خوراک فراہم کی جائے گی اس کی ایک وجہ امریکی جدت طرازی، تخلیقیت اور محنت بھی ہوگی۔”