محکمہ خارجہ کی نئی مشیر اعلٰی: سکالر اور مصنفہ

Woman speaking at lectern (Carnegie Mellon University)
کائرن سکِنر 2014ء میں پِٹس برگ میں کارنیگی میلن یونیورسٹی میں سامعین سے خطاب کر رہی ہیں۔ (Carnegie Mellon University)

وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے محکمہ خارجہ میں  کائرن سکِنر کی بطور مشیرِ اعلٰی  تعیناتی کا اعلان کیا ہے۔ وہ محکمہ خارجہ میں پالیسی پلاننگ یعنی پالیسی کی منصوبہ بندی کی نئی ڈائریکٹر ہوں گی۔

سکِنر بین الاقوامی تعلقات کی ماہر ہونے کے ساتھ ساتھ کتابوں اور عالمانہ تبصروں کی مصنفہ بھی ہیں۔ وہ طویل المدتی حکمت عملی کی تیاری پر آزادانہ اور تزویراتی نقطہائے نظر پیش کیا کریں گی۔ وہ محکمہِ خارجہ کے مختلف بیوروز، دیگر حکومتی اداروں، اپنے غیر ملکی ہم منصبوں، علمی ماہرین اور نجی شعبے کے مابین ہم آہنگی پیدا کریں گی۔ پومپیو نے کہا، "امریکی عوام کی طرف سے محکمہِ خارجہ کے کام میں اُن کی بالغ نظری اور مہارت اہم اثاثے ثابت ہوں گے۔"

وال سٹریٹ جرنل اخبار کو ایک بیان دیتے ہوئے وزیر خارجہ نے سکِنر کو "قومی سلامتی کی طاقت کے ایک منبعے" اور "ایک خاتوں، کمال کی تزویراتی سوچ" کا نام دیا۔

سکِنر پِٹس برگ کی کارنیگی میلن یونیورسٹی کے سیاست اور تزویراتی حکمت عملی کی بانی ڈائریکٹر ہیں۔ وہ کارنیگی یونیورسٹی میں 1999ء سے لے کر اب تک پڑھاتی رہی ہیں اور ریاست کیلی فورنیا کے پالو آلٹو میں واقع سٹین فورڈ یونیورسٹی کے "ہُوور انسٹی ٹیوشن" میں ریسرچ فیلو کے طور پر کام کر چکی ہیں۔ وہ امریکہ کے محکمہ دفاع کے پالیسی بورڈ، بحری کاروائیوں کے سربراہ کے انتظامی پینل اور قومی سلامتی کے تعلیمی بورڈ میں بھی خدمات سر انجام دے چکی ہیں۔

سکِنر شریک مصنفہ کے طور پر دو کتابیں بھی لکھ چکی ہیں۔ ان کتابوں کے عنوانات ہیں: ریگن اِن ہِز اون ہینڈ [ریگن اپنی کارکردگی کے آئینے میں] اور ریگن: اے لائف اِن لیٹرز [ریگن: خطوط کے آئینے میں ایک زندگی]۔ یہ دونوں کتابیں نیویارک ٹائمز کی سب سے زیادہ بِکنے والی کتب کی فہرست میں شامل رہیں۔

وہ نیشنل ریویو آن لائن، ںیویارک ٹائمز، وال سٹریٹ جرنل اور بے شمار ابلاغی اداروں کے لیے مقالاتی مضامین لکھے چکی ہیں۔