Notre Dame cathedral in flames (© Francois Guillot/AFP/Getty Images)
وسطی پیرس میں شہرہ آفاق نوٹرے ڈام کیتھیڈرل سے دھوئیں کے بادل اور آگ کے شعلے بلند ہو رہے ہیں۔ (© Francois Guillot/AFP/Getty Images)

صدر ٹرمپ نے شہرہ آفاق نوٹرے ڈام کیتھیڈرل [نوٹرے ڈام کے گرجا گھر] میں آگ لگنے کی اطلاع ملنے پر فرانسسیسی عوام سے اپنے دکھ  کا اظہارکیا ہے۔ صدر معاشی امور پر تقریر کرنے کی غرض سے آج  ریاست منیسوٹا کا دورہ کر رہے ہیں۔

ٹرمپ نے یہ ذکر کرتے ہوئے کہ وہ اس عالیشان گرجا گھر میں کئی مرتبہ جا چکے ہیں کہا، "اس جیسا دوسرا کیتھیڈرل کوئی نہیں ہے۔" انہوں نے کہا کہ گرجا کہ گھر کو پہنچنے والے نقصان کو دیکھنا "ایک کربناک منظر ہے۔"

نائب صدر پینس نے ٹوئٹر پر اپنے ایک بیان کے ذریعے امریکی عوام کی سوچیں اور دعائیں "آگ بجھانے والے عملے  …  اور پیرس کے تمام لوگوں" تک پہنچائیں اور اس احساس کا اظہار کیا کہ نوٹرے ڈام "عقیدہ رکھنے والے دنیا بھر کے تمام لوگوں کے نزدیک ایک شہرہ آفاق علامت ہے۔"

Crowds of people watching Notre Dame burning in distance (© Nicolas Liponne/NurPhoto/Getty Images)
لوگ مرکزی پیرس میں نوٹرے ڈام کے شاہکار کیتھیڈرل کو جلتا ہوا دیکھ رہے ہیں۔ © Nicolas Liponne/NurPhoto/Getty Images)

خاتون اول میلانیا ٹرمپ نے کہا، "نوٹرے ڈام کی آگ کو دیکھنے کے بعد پیرس کے عوام کے لیے میرا دل رو رہا ہے۔ میں ہر ایک کی سلامتی کی لیے دعا گو ہوں۔"

ایک زمانے سے پیرس کے ایل دو لا سیتے پر واقع اس کیتھیڈرل کو گوتھک طرز تعمیر کا شاہکار مانا جاتا ہے۔ اس کی بنیادیں 1163ء میں رکھی گئیں اور وقفے وقفے سے اس کی تزئین و آرائش کی جاتی رہی۔ ٹرمپ نے کہا، "اس کا شمار دنیا کے عظیم خزینوں میں ہوتا ہے۔"