ہسپتال میں بستروں پر لیٹے لوگ اور ان کے قریب کھڑے دیگر لوگ۔ (© Xiong Qi/Xinhua/Getty)
نئے کورونا وائرس سے متاثرہ مریض 5 فروری کو چین کے شہر ووہان کے عارضی ہسپتال میں موجود ہیں جو ایک نمائش گاہ کے مرکز کو طبی مرکز میں تبدیل کر کے بنایا گیا ہے۔ (© Xiong Qi/Xinhua/Getty)

امریکہ نے بیرون ملک کورونا وائرس کی بیماری ‘کوویڈ۔19’ (COVID-19) کا مقابلہ کرنے کے لیے موجودہ مالی وسائل میں سے 100 ملین ڈالر سے زیادہ کی رقم خرچ کرنے کا وعدہ کیا ہے۔ یہ اقدام دنیا بھر میں وبائی بیماریوں کے خلاف جدوجہد میں امریکہ کے مسلسل قائدانہ کردار کا مظہر ہے۔

امریکہ کے وزیر خارجہ مائیکل آر پومپیو نے 7 فروری کو اس امداد کا اعلان کرتے ہوئے کہا، ”امریکی نجی شعبے کی جانب سے سیکڑوں ملین ڈالر کے فراخدلانہ عطیات سمیت، حکومت کی جانب سے امداد کا یہ وعدہ، اس وبا سے نمٹنے کی جدوجہد میں امریکہ کی مضبوط قیادت کا عملی مظاہرہ ہے۔”

امریکہ کے عالمی ترقیاتی ادارے (یوایس ایڈ) نے 2 مارچ کو اعلان کیا کہ وہ ”کوویڈ۔19” سےمتاثرہ یا اس کے پھیلاؤ کے شدید خطرات سے دوچار 25 ممالک کی مالی مدد کے لیے 37 ملین ڈالر دے رہا ہے۔ یہ رقم تجربہ گاہوں کو بہتر بنانے کی کاوشوں، خطرات کے شعورو آگاہی اور نجی حفاظتی سازوسامان کی تقسیم جن میں ماسک، دستانے اور گاؤن شامل ہیں، پر خرچ ہو گی۔

تصویری خاکہ جس پر یہ عبارت تحریر ہے: ''امریکہ نے مہلک کورونا وائرس کا مقابلہ کرنے کے لیے 100 ملین ڈالر تک کی امداد دینے کا وعدہ کیا ہے۔'' (State Dept.)
(State Dept.)

اس بیماری کی سب سے پہلے نشاندہی چین کے صوبہ ہوبے کے شہر ووہان میں ہوئی تھی مگر اب یہ پوری دنیا بھر میں پھیل چکی ہے۔

امریکی امداد وبائی بیماریوں کی روک تھام اور ان کے علاج کے لیے امریکہ کے پختہ عزم کی عکاسی کرتی ہے۔ جیسا کہ عالمگیر سطح پر صحت کے تحفظ سے متعلق امریکی حکمت عملی میں بیان کیا گیا ہے، امریکہ وبائی بیماریوں کے خطرات کی ان کے آغاز ہی میں بہتر طور سے روک تھام، نشاندہی اور ان سے نمٹنے کے لیے دوسرے ممالک کے ساتھ مل کر کام کرتا ہے۔

”کوویڈ۔19” جیسی بیماریوں سمیت یو ایس ایڈ 2009 سے لے کر اب تک، وباؤں اور صحت سے متعلق جنم لینے والے نئے خطرات کی روک تھام، نشاندہی اور ان کے خلاف جوابی اقدامات میں مدد دینے کے لیے ایک ارب ڈالر سے زیادہ رقم خرچ کر چکا ہے۔

امریکی حکومت کی جانب سے دی جانے والی مالی امداد اُن سیکڑوں ملین ڈالر کے علاوہ ہے جن کا امریکی تنظیمیں ”کوویڈ۔19” کا پھیلاؤ روکنے کے لیے دینے کا وعدہ کر چکی ہیں۔

حفاظتی لباس پہنے چار افراد انگوٹھے کا نشان بنا کر پسندیدگی کا اظہار کر رہے ہیں۔ (© Project HOPE)
6 فروری کو مربوط چینی و مغربی طریقہائے علاج کے ہوبے کے صوبائی ہسپتال میں ڈاکٹر ”پراجیکٹ ہوپ” کی جانب سے دیئے گئے ذاتی حفاظتی لباس پہنے ہوئے ہیں۔ (© Project HOPE)

امریکہ میں قائم، ”پراجیکٹ ہوپ” نامی ایک غیرسرکاری ادارے کے مطابق امدادی گرپوں نے ہوبے صوبے میں آسمان کو چھوتی مانگ کو پورا کرنے کے لیے 2 ملین سے زیادہ ماسک، 11,000 حفاظتی لباس اور ربڑ کے دستانوں کے 280,000 جوڑے بطور عطیہ بھیجے ہیں۔

”انوویو” اور ”جانسن اینڈ جانسن” سمیت امریکی دواساز کمپنیاں بھی ویکیسن کی تیاری میں مصروف ہیں۔