امریکہ کے نیشنل گارڈ (امریکہ کے قومی محافظ) کے جوان کورونا وائرس سے لاحق ہونے والی مہلک بیماری کووِڈ۔19 کے خلاف پورے امریکہ کی جنگ میں اگلی صفوں میں ہیں۔ یہ امریکی سپاہی گارڈ کے دوہرے کردار کو ظاہر کرتے ہیں جنہیں بیک وقت اندرون ملک ہنگامی حالات سے نمٹنے اور بیرون ملک امریکی فوجی مقاصد کی انجام دہی کے لیے تیار رہنا ہوتا ہے۔

امریکی فوج کے منفرد عنصر، نیشنل گارڈ کے ”شہری سپاہی” جز وقتی فوجی تربیت جاری رکھتے ہوئے عموماً غیرفوجی نوکریاں کرتے ہیں یا کالجوں میں تعلیم حاصل کرتے ہیں۔

انہیں امریکہ کے صدر یا ان کی ریاست کے گورنر کی جانب سے کسی بھی وقت ایک لمحے کے نوٹس پر سرکاری خدمات کے لیے طلب کیا جا سکتا ہے۔

22 مارچ کو صدر ٹرمپ نے بری طرح متاثرہ ریاستوں یعنی کیلی فورنیا، نیو یارک اور واشنگٹن میں کووِڈ۔19 کا مقابلہ کرنے کے لیے نیشنل گارڈ کی مدد کے لیے وفاق کی جانب سے مکمل معاونت کا حکم جاری کیا۔ ایسے اختیار نامے ہر ریاست کی وفاقی وسائل تک رسائی کو آسان بناتے ہیں۔ تاہم ہر ریاست کا گورنر اپنی ریاست کے نیشنل گارڈ کے دستوں کی سرگرمیوں کی بدستور کمان کرتا رہتا ہے۔

فوجی سپاہی ڈبوں میں کھانے پینے کی اشیا ڈال رہے ہیں۔ (© Rich Pedroncelli/AP Images)
21 مارچ کو کیلی فورنیا کے علاقے سیکرامنٹو میں کیلی فورنیا نیشنل گارڈ کے سپاہی ”سیکرامنٹو فوڈ بنک اینڈ فیملی سروس” میں ڈبوں میں کھانے پینے کی اشیا ڈال رہے ہیں۔ (© Rich Pedroncelli/AP Images)

اس وقت ملک بھر میں گارڈ کے 8000 سے زیادہ سپاہی تعینات ہیں جو تمام 50 ریاستوں، امریکی عملداری میں آنے والے تین علاقوں اور ڈسٹرکٹ آف کولمبیا میں کووِڈ۔19 کے خلاف اقدامات میں مدد کر رہے ہیں۔

23 مارچ کو ایک نیوز کانفرنس میں امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر نے بتایا، ”ہمارے نیشنل گارڈز کے عظیم سپاہی لوگوں کے اپنی گاڑیوں میں بیٹھے بٹھائے طبی معائنے کی جگہوں پر مدد دینے، غیرمحفوظ آبادی کو تحفظ دینے کے لیے خوراک کی ترسیل، اور ریاستی منصوبوں کی معاونت اور مقامی سطح پر بیماری کے خلاف اقدامات میں رابطوں جیسے کام کر رہے ہیں۔”

ہر ریاست مقامی ضروریات کے مطابق نیشنل گارڈ سے کام لیتی ہے۔ فلوریڈا اور لوزیانا میں یہ سپاہی کووِڈ۔19 کے ٹیسٹ کرنے میں ریاستی محکمہ صحت کے حکام کا ہاتھ بٹا رہے ہیں۔ ریاست ارکنسا میں یہ سپاہی صحت عامہ کی معلومات سے متعلق انتہائی مصروف ٹیلی فون لائنوں پر لوگوں کی کالوں کے جواب دے رہے ہیں۔ میری لینڈ، پینسلوینیا اور وسکونسن میں گارڈ کے جوانوں نے تفریحی بحری جہازوں پر اس بیماری سے ممکنہ طور پر متاثر ہونے والے اپنی ریاست کے لوگوں کو ایک سے دوسری جگہ منتقل کیا اور ان کی مدد کی۔

فضائیہ کے میجر جنرل اور پینسلوینیا نیشنل گارڈ کے ایڈجوٹنٹ، جنرل انتھونی کیریلی نے کہا، ”نیشنل گارڈ کا ایک انتہائی اہم مشن ہمارے اپنے لوگوں کی مدد کرنا ہے۔ اپنے ہمسایوں کی مدد اور خدمت کرنا ایک نہایت ذاتی طرز کی کوشش ہے (کیونکہ) ہم یہیں رہتے ہیں۔ اس کام میں ہم سب ایک ہیں۔”