بحیثیت وزیرخارجہ ایشیا اور بحرالکاہل کے خطے کے اپنے پہلے دورے کے دوران، ریکس ٹِلرسن نے 18 اور 19 مارچ  کو چین کا دورہ کیا۔

امریکہ کے اعلٰی ترین سفارت کار، ٹِلرسن نے "امریکہ اور چین کے درمیان تعمیری اور نتیجہ خیز تعلقات استوار کرنے کے لیے آگے بڑھنے کے طریقہِ کار پر" تبادلہ خیال کرنے کی خاطر چین کے صدر، شی جِن پھنگ، سٹیٹ کونسلر یانگ شی چی اور وزیر خارجہ وانگ یی سے ملاقاتیں کیں۔

وانگ نے کہا، "چین اور امریکہ کے درمیان خیالات کے تبادلے ہوتے رہیں گے اور یہ چین – امریکہ تعاون کا ایک اہم پہلو ہے اور رہے گا۔"

تجارت اور سرمایہ کاری ایجنڈے پر سرِفہرست رہے کیونکہ چین امریکہ کا دوسرا سب سے بڑا تجارتی شراکت دار ہے اور امریکہ ایشیا اور بحرالکاہل کے خطے میں اپنے معاشی سرگرمیوں کو وسعت دینے اور بڑہانے کے لیے کوشاں ہے۔

ٹِلرسن نے کہا، "امریکہ اور چین دنیا کی دو سب سے بڑی معیشتیں ہیں اور ہم دونوں کو ہر صورت استحکام اور ترقی کو فروغ دینا چاہیے۔ ہم دونوں ممالک کے درمیان ایک ایسا مثبت تجارتی تعلق ہونا چاہیے جو منصفانہ ہونے کے ساتھ ساتھ دوطرفہ طور پر فائدہ مند  بھی ہو۔"

خطے کے اپنے حالیہ دورے کے دوران، ٹِلرسن نے 15 مارچ کو جاپان اور 17 مارچ کو جنوبی کوریا کا دورہ کیا۔ وزیر دفاع، جِم میٹس نے اپنا نیا منصب سنبھالنے کے بعد اپنے پہلے بیرونی دورے کے طور پر اس سال کے اوائل میں ایشیا – بحرالکاہل کے خطے کا دورہ کیا جو امریکہ کے نزدیک اس خطے کی اہمیت کا غماز ہے۔

 

 

 

سکول کی کتابیں، پنسلیں اور کیلکولیٹر۔ (Shutterstock)
(Shutterstock)
سفارت کاری سے آگے: کلاس روم کے روابط
سال 2016 میں تعلیم حاصل کرنے کے لیے328,000 سے زائد چینی طلبا امریکہ آئے۔
دنیا کے کسی بھی ملک کے مقابلے میں تعلیم حاصل کرنے کے لیے چین سے زیادہ طلبا امریکہ آتے ہیں۔
تقریباً 13,000 امریکیوں نے 2015ء میں چین میں تعلیم حاصل کی۔